دُنیا ظالموں سے بھری پڑی ہے

ﺁﺝ ﭘﮭﺮ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯽ ﻓﻠﮏ ﺷﮕﺎﻑ ﻧﻌﺮﻭﮞ ﻧﮯ ﺍﺳﺘﻘﺒﺎﻝ ﮐﯿﺎ۔ ﻣﯿﮟ ﺗﻨﮓ ﺁﮔﺌﯽ ﮨﻮﮞ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﻣﺎﮞ ﺳﮯ ﮨﺮ ﻭﻗﺖ ﮐﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﺩﺧﻞ ﺍﻧﺪﺍﺯﯼ ، ﮨﺮ ﻭﻗﺖ ﺭﻭﮎ ﭨﻮﮎ ﺍﺏ ﺍﺱ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﻣﺠﮭﮯ ﺭﮐﮭﻮ ﯾﺎ ﺍﻧﮩﯿﮟ، ﺍُﻑ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﮏ ﮔﯿﺎ ﮨﻮﮞ ﺍﺱ ﺭﻭﺯ ﮐﯽ ﮐِﻞ ﮐِﻞ ﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﻣُﺼﯿﺒﺖ ﮨﮯ؟ ؟؟؟ ﺁﻓﺲ ﺳﮯ ﺗﮭﮑﮯ ﻣﺮﮮ ﮔﮭﺮ ﺁﺅ ﺍﻭﺭ ﯾﮩﺎﮞ ﮐﮯ ﻣﺴﺌﻠﮯ ﮨﯽ ﺧﺘﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ ،ﺣﺪ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ ۔۔۔ ﮔﮭﺮ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﮩﻨﻢ ؟؟؟ ﻧﮧ ﺑﯿﭩﺎ ﻧﮧ ! ﻣﺎﮞ ﻧﮯ ﺩﻭﭘﭩﮯ ﮐﮯ ﭘَﻠﻮ ﺳﮯ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ

ﺧُﺸﮏ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ ، ﻣﯿﮟ ﺗﻮ ﺑﺲ ﺑﮩﻮ ﺳﮯ ﯾﮧ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﮐﻞ ﮐﯽ ﺭﮐﮭﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺭﻭﭨﯽ ﮐﮭﺎﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎ ﺭﮨﯽ ﺳﺨﺖ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ ۔ ﺍﻭﺭ ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺳﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﺭﻭﺯ ﮐﮯ ﺟﮭﮕﮍﻭﮞ ﮐﺎ ﺣﻞ ﮈﮬﻮﻧﮉ ﭼُﮑﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﭼﻞ ﻣﺎﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﺠﮫ ﮐﻮ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﻟﮯ ﭼﻠﻮﮞ ﺗﺠﮫ ﮐﻮ ﺗﯿﻦ ﺩﻥ ﺳﮯ ﺑُﺨﺎﺭ ﺁ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ؟؟؟؟ ﺫﺭﺍ ﺳﯽ ﺗﻮﺟﮧ ﭘﺎ ﮐﺮ ﻣﺎﮞ ﺟﯿﺴﮯ ﻧﮩﺎﻝ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ۔ ﻣﺎﮞ ﺗﻮ ﺗﮭﮏ ﮔﺌﯽ ﮨﻮ ﮔﯽ ﺍﺱ ﭘﯿﮍ ﮐﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﭘﺘﮭﺮ ﭘﺮ ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺩﯾﺮ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺑﯿﭩﮫ ﮐﺮ ﺁﺭﺍﻡ ﮐﺮ ﻟﮯ، ﺍُﻓﻮﮦ !!!!! ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﺎ ﺑﭩﻮﮦ ﮔﮭﺮ ﺑﮭﻮﻝ ﮐﺮ ﺁ ﮔﯿﺎ ﮨﻮﮞ ﺗﻮ ﯾﮩﺎﮞ ﺑﯿﭩﮫ ﻣﯿﮟ ﺍﺑﮭﯽ ﺁﯾﺎ ۔ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺮ ﺁﮐﺮ ﺳﻮ ﮔﯿﺎ ۔۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺭﻭﺯ ﺭﻭﺯ ﮐﮯ ﺟﮭﮕﮍﻭﮞ ﺳﮯ ﻧﺠﺎﺕ ﺟﻮ ﭘﺎ ﻟﯽ ﺗﮭﯽ؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﺪﮬﯽ ﮨﻮﻡ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻧﺌﮯ ﻣﮑﯿﻦ ﮐﺎ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮨﻮ ﭼﮑﺎ ﺗﮭﺎ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں حیران ہوں ایسے لوگ بخشے کیسے جائیں گے. اللہ عزوجل ہم سب کو راہ راست کی اور ماں با پ کی خدمت کی توفیق عطا کرے..

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں