عائشہ گلالئی والد سمیت وزیراعظم سے ملنے پہنچیں تو ان کیساتھ کیا سلوک کیا گیا؟ خبر پڑھ کر آپ بھی دنگ رہ جائیں گے

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے تحریک انصاف کی منحرف رکن قومی اسمبلی عائشہ گلالئی سے ملنے سے انکارکردیاہے جس کے بعدعائشہ گلالئی وزیراعظم سیکرٹریٹ سے مایوسی کے عالم میں واپس لوٹ گئیں ، عائشہ گلالئی اپنے والدکے ہمراہ وزیراعظم سیکرٹریٹ پہنچی

لیکن وزیراعظم شاہدخاقان عباسی نے ملنے سے انکار کردیا۔یہ واقعہ گزشتہ ہفتے ہواجب وزیراعظم شاہد خاقان عباسی اپنے دفترمیں موجودتھے ۔معتبرذرائع نے بتایاکہ عائشہ گلالئی اپنے والدکے ہمراہ سیکرٹریٹ پہنچی اورملنے بارے وزیراعظم سے اپائمنٹ بارے کہا۔متعلقہ افسران نے عائشہ گلالئی پرواضح کردیاکہ وزیراعظم نے واضع طور پر کہاہے کہ وہ عائشہ گلالئی سے اپنے دفترمیں ملاقات نہیں کرسکتے ،عائشہ غمگین اورمایوسی کے عالم میں واپس گھرچلی گئیں ۔

یادرہے جب سے تحریک انصاف سے منحرف ہوئیں ہیں عائشہ گلالئی ڈپریشن کی مریضہ بن چکی ہیں اورپولی کلینک ہسپتال سے مسلسل علاج بھی کرارہی ہیں ۔وزیراعظم شاہدخاقان کی طرف سے ملنے سے انکاری عائشہ گلالئی سے رابطہ کرکے موقف جاننے کی کوشش کی گئی لیکن انہوں نے وضاحت نہیں دی۔ جبکہ دوسری جانب الیکشن کمیشن آف پاکستان نے حزبِ مخالف کی جماعت پاکستان تحریکِ انصاف (پی ٹی آئی) کی طرف سے اپنی جماعت کی ایک منحرف رکن عائشہ گلالئی کی قومی اسمبلی کی رکنیت ختم کرنے کے لیے دائر ریفرنس مسترد کر دیا ہے۔

پی ٹی آئی کے سربراہ عمران خان نے جماعت کی پالیسی سے انحراف کا الزام عائد کرتے ہوئے عائشہ گلالئی کے خلاف ریفرنس دائر کر رکھا تھا جس پرکمیشن نے اپنا فیصلہ سنایا۔اس فیصلے کے بعد عائشہ گلالئی بدستور قومی اسمبلی کی رکن رہیں گی۔گلالئی 2013ء کے عام انتخابات میں قومی اسمبلی میں خواتین کے لیے مخصوص نسشتوں پر پاکستان تحریکِ انصاف کی طرف سے نامزد ہوئی تھیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں