اسحا ق ڈار کا پاکستان میں چیک اپ کرائیں گے ہم بھی تو دیکھیں کیا بیماری ہے، احتساب عدالت نے دھما کے دار اعلان کر دیا

اسلام آباد کی کی احتساب عدالت نے وزیر خزانہ اسحاق ڈار کی عدم حاصری پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے ریمارکس دیئے اسحاق ڈار واپس آئے تو یہاں کے ڈاکٹرز سے بھی چیک آپ کروائیں گے ہم دیکھیں گے کہ انہیں کیا بیماری ہے اور وہ کئی بھاگ تو نہیں رہے

تفصیلات کے مطابق وزیر خزانہ اسحاق دار کے خلاف آمدن سے زائد اثاثہ جات ریفرنس کی سماعت احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے کی دوران سماعت وزیر خزانہ اسحاق ڈار کے قانونی مشیر خواجہ حارث کے جونئیر کی جانب سے وزیر خزانہ اسحاق ڈار کی 6نومبر کی میڈیکل رپورٹ عدالت میں پیش کی جس پر نیب پراسیکیورٹر نے اعتراضات اٹھائے اور میڈیکل رپورٹ کی مخالفت کی اسحاق ڈار کے وکیل نے عدالت سے استدعا کی کہ اسحاق ڈار کی طرف سے نمائندہ مقرر کیا جائے

جو ان کی غیر حاضری میں عدالت پیش ہو دوران سماعت احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے ریمارکس دیتے ہوئے اسحاق دار واپسی آئے تو یہاأ کے ڈاکٹروں سے بھی چیک آپ کروائیں گے ہم دیکھیں گے ان کو کیا بیماری ہے کئی وہ بھاگ تونہیں رہے ڈاکٹرز نے سفر کی اجازت نہیں دی اس لئے وہ واپس نہیں آئے بعد ازاں احتساب عدالت کے فاضل جج نے حکم دیا کہ کم ازکم اسحاق ڈار ایک مرتبہ خود پیش ہوں جس پر وزیر خزانہ اسحاق ڈار کی جانب سے قوسین فیصل مفتی

ایڈووکیٹ نے عدالت کو بتایا کہ ایسی کوئی بات نہیں وہ بھاگ نہیں رہے جس پر نیب پراسکیوٹر عمران شفیق نے عدالت سے استدعا کی کہ اسحاق ڈار کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کیے جائے عدالت نے اسحاق ڈار کو بہت موقع دیا دوران سماعت فاضل جج نے ریمارکس دیئے کہ اسحاق ڈار کے ضامن کہا ں ہے جس پر نیب پراسیکیورٹر نے عدالت کو بتایا کہ ضامن کو ہدایت جاری کی گئی تھی کہ آئے اسحاق ڈار کی حاضری کو یقنی بنائے اس بار ضامن بھی پیش نہیں ہوا جس پر اسحاق ڈار کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ ضامن کو آج طلب نہیں کیا گیا تھا آئندہ سماعت کیلئے نوٹس جاری کردے بعد ازاں عدالت نے وزیر خزانہ اسحاق ڈار کے ضامن کو آئندہ سماعت پر پیش ہونے کا حکم دیتے ہوئے نیب حکام کی ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کرنے کا حکم دیتے ہوئے کیس کی مزید سماعت 14نومبر تک کے لئے ملتوی کردی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں